pure life

pure life

pure life, Volume 4, Issue 10, Summer 2017

مقالات

۱.

بین وسائل الفضاء الإلکترونی وخصوصیات التعلیم الدینی

تعداد بازدید : ۲۵ تعداد دانلود : ۱۷
ی عد التعلیم الدینی رکنا أساسیا فی بناء الفرد وحصنا حصینا للمجتمع یحفظه من الضعف والظلال والانبتات. بمقدار الاعتناء به (التعلیم الدینی) وتطویره، یکتسب الفرد قوه وعزه، والمجتمع حصانه ومناعه.من جهه أخرى، عرف العالم فی العقود الأخیره انفجارا معرفیا رهیبا فی تکنولوجیا الإتصال وتقنیه المعلومات حتى أصبحنا نعدّ أکثر من ملیار مستخدم للإنترنت على وجه البسیطه، وما یزید عن أربعه ملیار مستخدم للهواتف المحموله، أکثرهم من فئه الشباب. أمام هذه الثوره الاتصالیه والمعلوماتیه، لم تعد أنظمه التعلیم التقلیدی، بتقنیاتها المحدوده، قادره على تلبیه متطلبات العصر، ومجاراه نسق الحیاه المتسمه بالسرعه، والمرونه، والتغیرات السریعه.أصبحت منظومه التعلیم التقلیدی فی تراجع وانحسار فاسحه المجال أمام نوع جدید من التعلیم غیر التقلیدی متخذا من الفضاء الإلکترونی، بوسائله الحدیثه وتقنیاته المتطوره، إطارا له.وضعنا هذا الواقع الجدید أمام حقیقه مفادها أنّ أسالیب، وتقنیات، ووسائل التعلیم الإلکترونی نشأت وتطورت فی الغرب؛ بمعنى أنها لم ت ُراع فی نشأتها وتطویرها خصوصیات العلوم الدینیه الإسلامیه الأصیله، ولا متطلباتها فی مسألتی التعلم والتعلیم، کما أن إسقاط هذه الأسالیب والتقنیات، واستعمال هذه الوسائل دون مراعاه خصوصیات التعلیم الدینی الإسلامی یؤدی إلى نتائج عکسیه تنحرف به (التعلیم الدینی) عن إدراک أهدافه، وتخلق مشکلات عدیده على المستویات العلمیه والتربویه والشرعیه.أصبحنا إذن أمام معادله صعبه: کیف یجاری التعلیم الدینی نسق الحیاه، ویلبی متطلبات العصر دون أن یفقد خصوصیاته، ودون أن ی ضیع أهدافه، وسط الکم الهائل من التقنیات الحدیثه والوسائل المتجدده.بلغه أخرى: - کیف نطوع ونطور وسائل الفضاء الإلکترونی حتى تتوافق وخصوصیات التعلم والتعلیم الدینی وفق المنهج الإسلامی الأصیل؟أحاول فی هذه الدراسه تقدیم رؤیه موضوعیه حول بعض قضایا التعلیم والتعلم الدینی فی الفضاء الإلکترونی، وذلک عبر الإجابه عن أسئله جوهریه:1- ما هی الفوارق بین العلوم الدینیه (الإسلامیه) والعلوم الطبیعیه ؟2- ماذا یترتب عن تلک الفوارق؟3- ما هو دور کل من المعلم والوسائل الحدیثه فی عملیه التعلیم الدینی فی الفضاء الإلکترونی؟4- ما هی ضوابط تعلم وتعلیم العلوم الدینیه فی الفضاء الإلکترونی؟ما سیقع طرحه من أفکار ورؤى لا تعنی اتخاذ موقف سلبی من وسائل الفضاء الإلکترونی فی عملیتی التعلم والتعلیم الدینی، بقدر ما هو بحث علمی، هادئ ورصین عن کیفیه تطویر وتطویع هذه الوسائل المهّه لتتوافق وخصائص التعلیم الدینی حتى یتسنى لهذا الأخیر القیام بوظائفه دون انحراف ولا تشویه.
۲.

قدرات التعلیم الإلکترونی فی تعزیز التعلیم الدینی

تعداد بازدید : ۲۰ تعداد دانلود : ۲۴
لسنا بصدد أوجه الاختلاف والمقارنه بین التعلیم التقلیدی والتعلیم الالکترونی، ولا نحاول استعراض أسالیب وتقنیات هذا النوع من التعلیم ؛ بل نرید أن نسلط الضوء على قدرات التعلیم الالکترونی ومجالاته، والاسباب التی تجعل منه ذو فائده لا نستطیع الاستغناء عنها فی مجال تعزیز التعلیم الدینی، سواء على مجال الجامعات، أو المدارس الدینیه والمؤسسات التی تقوم بأنشطه مختلفه ضمن هذا المجال الفضائی الالکترونی، وضروره طرح هذا الموضوع وبیان تاریخه وجوانب الابتکار فیه ونظریاته وبیان النتائج التی نصل الیها من خلال استنتاج الممارسات التعلیمیه فی هذا النوع من التکنولوجیا الحدیثه التی تبذل معطیات قائمه على نظریات مدروسه، وابتکارات عالیه فی انجازاتها التی تغطی کافه الاحتیاجات أو تکون بدیله عن التعلیم المباشر وبیان الثمرات التی توفر ضمن هذا النطاق.
۳.

دور الفضاء الإلکترونی فی تطویر وتعزیز التعایش السلمی بین الأدیان

تعداد بازدید : ۲۶ تعداد دانلود : ۱۴
هدفت الدراسه التعرف على دور الفضاء الإلکترونی فی تطویر وتعزیز التعایش السلمی بین الأدیان، تکونت عینه البحث الکلیه من فردا، حیث بلغت رجال الدین، واساتذه الجامعات, ومدرساً للدراسات الاسلامیه, جرى اختیارهم بالطریقه القصدیه فی محافظه النجف الأشرف، اختیروا بالطریقه القصدیه, ونظرا لطبیعه الدراسه اعتمد الباحث المنهج الوصفی, ولتحقیق أهداف الدراسه, أعد الباحث استبانه تکونت من فقره, مقسمه على ثلاث مجالات هی: استخدام الفضاء الإلکترونی فی تعزیز التعایش السلمی، وخطاب الفضاء الإلکترونی فی التعایش السلمی، دور الاعلام الإلکترونی فی التعایش السلمی، وجرى التحقق من صدق الاستبانه وثباتها، واُعتمدت حزمه التحلیل الإحصائی (SPSS) لإستخراج النتائج أظهرت النتائج: أن آراء رجال الدین، واساتذه الجامعات, ومدرسین الدراسات الإسلامیه جاءت بدرجه مرتفعه فی مجال استخدام الفضاء الإلکترونی فی تعزیز التعایش السلمی، أن آراء رجال الدین، واساتذه الجامعات, ومدرسین الدراسات الإسلامیه جاءت بدرجه منخفضه فی مجال استخدام خطاب الفضاء الإلکترونی ودوره فی التعایش السلمی، أن آراء رجال الدین، واساتذه الجامعات, ومدرسین الدراسات الإسلامیه جاءت بدرجه مرتفعه، فی مجال دور الاعلام الإلکترونی فی التعایش السلمی. وقد أوصت الدراسه بما یأتی: ضروره العمل على تطویر الفضاء الإلکترونی بما یعزز التعایش السلمی بین الأدیان، جعل لغه الخطاب فی الفضاء الإلکترونی تعزز منهج الوسطیه والإعتدال بما یخدم التعایش السلمی بین الأدیان المختلفه.
۴.

ملخص کتاب التعلیم الإلکترونی لسعدیه الأحمری

تعداد بازدید : ۲۱ تعداد دانلود : ۱۶
نظام تعلیمی یستخدم تقنیات المعلومات وشبکات الحاسوب فی تدعیم وتوسیع نطاق العملیه التعلیمیه من خلال خلق بیئه تعلیمیه تفاعلیه من خلال تقنیات الإلکترونیه جدیده والتنوع فی مصادر المعلومات والخبره.
۵.

نقش متقابل آموزش حضوری و مجازی در ارتقای سطح آموزش های دینی

تعداد بازدید : ۲۸ تعداد دانلود : ۲۶
دین اسلام به عنوان آخرین دین الهی، رسالتی جهانی دارد و بسط و گسترش آموزه های دینی وظیفه ای است که در این دین تأکید فراوانی روی آن شده است؛ از این رو در عصر معاصر نیاز به امکانات و محیط های مختلفی برای انتقال مفاهیم دینی وجود دارد. از طرف دیگر، راه اولیه انتقال آموزه های دینی روش حضوری و چهره به چهره است که از آغاز بشریت تاکنون استفاده می شود؛ اما در کنار آموزش حضوری، امروزه از طریق اینترنت و با آموزش مجازی، دین و مفاهیم مرتبط با آن آموزش را سریع تر و فراگیرتر کرده است که هر کدام یک از این نوع آموزش ها شامل روش ها و ابزارهای متفاوتی است و با توجه به نیازهای مختلفی شکل می گیرند. آموزش حضوری و مجازی آموزه های دینی دو روی یک سکه هستند که می توانند مکمل یکدیگر باشند.در این پژوهش به بررسی نکات ضعف و قوت امکانات آموزش حضوری و مجازی دین پرداخته شده و تأثیر متقابل این دو روش در ارتقای مفاهیم و آموزه های دینی در عرصه جهانی بررسی و تحلیل شده است.
۶.

آسیب شناسی و ارائه راهکارهای ارتقای آموزش های دینی در فضای مجازی

تعداد بازدید : ۴۲ تعداد دانلود : ۴۴
با آغاز هزاره سوم میلادی و توسعه و رشد فناوری های نوین اطلاعات و ارتباطات و نیز با حضور و گستردگی رسانه ها در سپهر عمومی و شئون زندگی، چارچوبی فراهم شده است که آموزش، فرهنگ، سیاست و اجتماع انسانی حول محور ارتباطات و رسانه در بستر فضای مجازی جریان یابد. از طرف دیگر، انسان قرن بیست و یکم با توجه به مشغله زیاد در عصر مدرن و نداشتن وقت کافی برای حضور در دوره های آموزش حضوری، به سبک جدیدی از آموزش به نام آموزش مجازی نیاز پیدا کرده که اکنون در سرتاسر دنیا در حال گسترش است. این پژوهش که با روش کیفی از نوع توصیفی- پیمایشی، کتابخانه ای و مشاهده مشارکتی انجام شده، با هدف آسیب شناسی آموزش های دینی و علوم اسلامی در فضای مجازی و ارائه راهکارهای ارتقای آن صورت گرفته است. همچنین مبانی نظری برای تبیین علمی پژوهش بر اساس آموزه های دینی در اهمیت تعلیم، تعلم و تبلیغ انجام یافته و در حوزه ارتباطات نیز بر اساس نظریه های ارتباطی اشاعه و نوآوری اورت راجرز، تبلیغات به مثابه گفتمان دانش- قدرت میشل فوکو، نقش های اجتماعی ارتباطات هارولد لاسول و چارلز رایت، نقش وسایل ارتباط جمعی ویلبر شرام، نظریه آموزشی اثربخش بزرگسالان و نقش ارتباطات گرافیکی انجام شده است. نتایج پژوهش نشان می دهد با توجه به ساختار نوین ارتباطی در عصر ارتباطات و فناوری اطلاعات؛ ﻓﻀﺎی ﻣﺠﺎزی دارای کارکرد، فرصت، ظرفیت مناسب و ﻧﻘﺶ تأثیرگذاری در ﺷﮑﻞﮔﯿﺮی سبک جدیدی از آموزش غیر حضوری و الکترونیک در حوزه آموزش دینی است؛ اما با توجه به نوپا بودن آموزش های دینی در فضای مجازی لازم است با برنامه ریزی مناسب، آسیب ها و ضعف ها شناسایی شود تا با ساماندهی و رفع چالش های موجود از این فرصت برای تحقق منویات مقام معظم رهبری در خصوص سواد فضای مجازی، اهداف آموزشی، فرهنگی، تبلیغی و احیا و گسترش تمدن اسلامی استفاده گردد.
۷.

دانشگاه مجازی المصطفی (صلی الله علیه وآله) متولی آموزش زبان فارسی با رویکرد گسترش فرهنگ اسلامی- ایرانی

تعداد بازدید : ۴۸ تعداد دانلود : ۲۵
چنان چه به آموزش و گسترش زبان فارسی با اهداف انتقال فرهنگ و معارف اسلامی ایرانی، صدور گفتمان انقلاب اسلامی و معرفی تمدن نوین اسلامی توجه شود؛ به نظر می رسد مناسب ترین متولی برای آموزش زبان فارسی با این اهداف جامعه المصطفی العالمیه خواهد بود که علاوه بر سابقه آموزش حضوری چند ده ساله و نیز سابقه مجازی چند ساله در آموزش زبان فارسی، متولی نشر معارف و گفتمان انقلاب اسلامی در حوزه بین الملل نیز می باشد. در این میان، استفاده از فضای مجازی و ارتباط و آموزش از طریق اینترنت و شبکه های اجتماعی فرصتی بی نظیر در اختیار دانشگاه مجازی المصطفی قرار داده که با سهولت هر چه بیشتر به مخاطبانی از سراسر دنیا دسترسی پیدا کرده و هدف بیان شده را محقق نماید. آن چه به نظر می رسد در این میان ضرورت دارد تبیین صحیح نقش، جایگاه و افق پیش روی دانشگاه مجازی در این حوزه است که خود را در کسوت متولی گسترش زبان فارسی با هدف آموزش معارف اسلامی و صدور گفتمان انقلاب اسلامی در فضای مجازی و بین الملل بشناسد، بشناساند و از ظرفیت های موجود در این فضا به شکل بهینه بهره ببرد. بر همین اساس، در این پژوهش پس از معرفی گروه زبان فارسی دانشگاه مجازی با مراجعه به استادان زبان فارسی و معارف اسلامی این گروه و مصاحبه با آنان، نظرات ایشان در این زمینه گردآوری و ارائه شده است. از جمله نکات مورد توجه استادان، مزایای فضای مجازی، ضرورت انتقال فرهنگ و معارف به زبان فارسی و زمینه سازی برای معرفی تمدن نوین اسلامی است.
۸.

سائبر اسپیس میں موجودہ تعلیمی مواقع

تعداد بازدید : ۶۳ تعداد دانلود : ۲۸
سائبر اسپیس معلومات کا وہ ذخیرہ ہے جس میں ہر طرح کی کتب ، مقالہ جات اور تحقیقات نہ صرف محفوظ کی گئی ہیں بلکہ ہر گزرتے دن ان معلومات میں اضافہ کیا جا رہا ہے ۔ تعلیمی، سماجی اور اقتصادی خوشحالی میں سائبر اسپیس اپنا کردار ادا کرنے میں ایک حقیقت بن چکی ہے ۔ سائبر اسپیس نے ہر شعبہ زندگی میں بنی نوع انسان کے لیے ترقی اور علم کی نئی جہتیں روشناس کروائی ہیں ۔ ہر دور میں علم کا حصول انسان کا ایک اہم ترین مقصد رہا ہے ۔ علم کی پیا س بجھانے کے لیے طلباء دور دراز کا سفر کرتے چلے آئے ہیں ۔علم کی پیاس بجھانے میں وقت اور حالات ہمیشہ آڑے آتے رہے تاہم اس تشنگی کو بجھانے کے لیے سائبر اسپیس ایک اہم کردار ادا کر سکتی ہے ۔ مذاہب کے مابین مکالمہ ہو یا مختلف مذاہب کا تقابلی جائزہ ، سائبر اسپیس کی مدد سے تبصرہ یا تجزیہ کرنا بے حد آسان بن چکا ہے ۔ اب طالب علم کے لیے عالمی سطح کے علم کا حصول ناممکن نہیں رہا ۔ دین اور دینی معلومات کے فروغ کے لیے سائبر اسپیس اپنی ایک منفرد حیثیت رکھتی ہے ۔ وہ وقت اب ماضی کا حصہ بن چکا ہے جب ہاتھ سے خطوط لکھ کر اپنا مدعا بیان کیا جاتا تھا ۔ کسی بھی مضمون کی معلومات کے لائبریریوں کو چھان مارا جاتا تھا ۔سائبر اسپیس نے ہر طرح کی معلومات کو بس ایک کلک کی دوری پر رکھ چھوڑا ہے ۔ ادہر مطلوبہ معلومات کے مضمون کو سرچ انجن پر لکھیے ادہر دنیا جہان کے علم کا خزانہ آپ کے کمپیوٹر کی اسکرین پر حاظر ہو جائے گا ۔ اس تمام معلومات میں سے اپنی مطلوبہ معلومات کو چن کر اپنی تحقیق کو جدید ترین بنایا جا سکتا ہے ۔ سائبرا سپیس کا دینی اور دنیاوی علم کے حصول کے لیے نہ صرف اہم کردار ہے بلکہ سماجی ، تعلیمی ، علاقائی ، اقتصادی، تہذیبی ، نفسیاتی ترقی میں بھی سائبر اسپیس کے کردار سے انکار ممکن نہیں۔سائبر اسپیس نے طالب علموں، تحقیق کاروں اور اساتذہ کے لیے بے شمار معلومات کا ذخیرہ پیدا کر دیا ہے ۔یہ معلومات جہانِ عالم کی ایک شاخ سے تعلق رکھتی ہیں چاہے وہ آرٹ یو ، فنون لطیفہ ہوں ، آرکیٹیکچر ہو ، سیاست ہو، مذہب ہو یا ادب ۔ گویاسائبر اسپیس کی وجہ سے ہر شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والوں کے لیے مطلوبہ معلومات بیش بہا تعداد میں موجود ہے ۔ دنیا کے ایسے دور دراز علاقے جہاں طلباء کے لیے غربت کے باعث سفر کرنا ممکن نہیں ان کے سائبر اسپیس کسی نعمت سے کم نہیں کیونکہ یہ سائبر اسپیس ہی ہے جو ایسے علاقوں میں معلومات باہم پہنچانے کا واحد او ر مؤثر ذریعہ ہے ۔ صرف یہی نہیں ۔یہ سائبر اسپیس کا ہی کمال ہے کہ علم کا وہ ذخیرہ جس کو محفوظ کرنے کے لیے کئی کئی ایکڑ پر محیط لائبریریوں کی ضرورت تھی آج اس کے لیے نہ تو بڑی جگہ کی ضرورت ہے اور نہ ہی ان گنت کتب کی ۔ یہاں تک کہ مطلوبہ مضمون کے مطابق معلومات کی باہم اور جلد فراہمی چند سیکنڈ میں ممکن بنا دی گئی ہے ۔ آج سائبر اسپیس کی وجہ سے انسان نے نہ صرف روئے زمین پر بلکہ سمندر اور خلاؤں کی تسخیر ممکن بنا لی ہے۔ ائیرو سپیس ٹیکنالوجی کی بدولت آج کا انسان دنیا کے ایک کونے سے دوسرے کونے تک باآسانی پہنچ جاتا ہے۔ انسان نے وقت کے دھارے کے ساتھ ساتھ چلنے کی وجہ سے کم از کم وقت میں زیادہ سے زیادہ مقاصد کے حصول کو ممکن بنا دیا ہے ۔ کمیونیکشن کے میدان میں انسان نے فضا ء میں موجود لہروں پہ بھی کمال کی قدرت حاصل کی ہے ۔ دنیا کے کسی بھی کونے میں کوئی واقعہ رونما ہو جائے تو کمیونیکیشن سسٹم کے ذریعہ دنیا کے کسی بھی ملک میں چند لمحوں میں اس خبر کو پہنچا دیا جاتا ہے ۔ سائبر اسپیس کی بدولت دنیا سمٹ چکی ہے اور ہر طرح کی خبروں کی ترسیل منٹوں تو دور کی بات سیکنڈ میں کر دی جاتی ہے ۔ ہر ملک کے باشندے دوسرے ملک کے بارے میں معلومات رکھتے ہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ مختلف تہذیبیں آپس میں مدغم ہوتی چلی جا رہی ہیں ۔ سائبر اسپیس نے انسان کی ترقی کی راہیں کھول دی ہیں ۔ سائبر اسپیس کی بدولت انسان نے نہ صرف اپنی علمی کمی کو پورا کیا ، انسانیت کا درس حاصل کیا بلکہ اقوامِ عالم کی تہذیبی اور اقتصادی ترقی بھی حاصل کی ۔ الغرض ہر شعبہ زندگی میں سائبر اسپیس اپنا ایک اہم کردار ادا کر رہی ہے ۔
۹.

سائبر اسپیس پر مکالمہ اور تقریب بین المذاہب کے لیے موجود مواقع کا تحقیقی جائزہ

نویسنده:
تعداد بازدید : ۲۹ تعداد دانلود : ۲۳
مختلف مسالک کے لوگوں کو تفرقے سے دور رہ کر ایک دوسرے کے ساتھ اتحاد و اتفاق کے ساتھ رہنے کا حکم نہ صرف قرآنی دستور ہے بلکہ یہ معاشرے میں اجتماعی زندگی گزارنے والے انسانوں کی پر امن بقائے حیات کے لیے ضروری بھی ہے لہذا تقریب بین المذاہب کی ضرورت قرآن و سنت کے ساتھ ساتھ حکم عقل کی بنیاد پر بھی مسلّم ہے۔ ایک اللہ اور ایک نبیؐ کے معتقد مختلف اسلامی مسالک کے اعتقادات اور تعلیمات میں بہت سے مشترکات کے باوجود ایک دوسرے سے دوری اور تفرقہ کی بنیادی وجوہات میں سے اہم ترین وجہ ایک دوسرے کے عقائد کے بارے میں عدم آگاہی اور اس بناء پر ایک دوسرے کے بارے میں پیدا ہونے والی بدگمانی ہے۔ لہذا اس دوری کو قربت اور بدگمانی کو حسنِ ظن میں بدلنے کا بہترین طریقہ ایک دوسرے کے عقائد اور تعلیمات کے بارے میں صحیح ذرائع سے آگاہ ہونا ہے۔ جس کے لیے عصر حاضر میں دیگر ذرائع اور طریقوں کے علاوہ ایک اہم اور مؤثر ترین ذریعہ انٹرنیٹ (سائبر اسپیس) ہے۔ انٹرنیٹ کی آمد کے بعد دنیا ایک گلوبل ویلیج میں تبدیل ہو چکی ہے اس سے نہ صرف بہت ساری سہولیات انسانی زندگی میں پیدا ہو چکی ہیں بلکہ اس کے ذریعے لوگوں اور اقوام کو ایک دوسرے کے افکار اور آراء سے آشنائی کے مواقع بھی پیدا ہو چکے ہیں۔ اس ضمن میں مختلف اسلامی مسالک کے دینی ادارے خصوصاً حوزات علمیہ اور ذمہ دار علمی شخصیات انٹرنیٹ پر اپنے اپنے مسالک کے عقائد اور تعلیمات معقول انداز میں پیش کر سکتے ہیں جن سے آگاہی کے بعد مشترکات کی بناء پر لوگوں کے قلوب ایک دوسرے کے قریب ہو سکتے ہیں۔ چونکہ عام حالات میں مختلف مسالک کے علماء کا براہ راست ایک دوسرے سے ملاقات ہمیشہ ممکن نہیں ہوتا لیکن انٹرنیٹ کے ذریعے بہ آسانی ان کے درمیان نہ صرف رابطہ ممکن ہوتا ہے بلکہ دن کے چوبیس گھنٹے ایک دوسرے سے با خبر رہ سکتے ہیں۔ تخریب کارانہ ذہنیت رکھنے والے لوگ آج جہاں انٹرنیٹ کا غلط استعمال کرتے ہوئے اسلامی مسالک کے درمیان غلط فہمیاں پیدا کرنے، اختلافات ایجاد کرنے اور دشمنیاں بھڑکانے کے لیے اس سہولت سے استفادہ کر رہے ہیں، وہاں مسلمانوں کے ہمدرد نیک اور ذمہ دار لوگوں کو چاہیے کہ وہ اس وسیلے کو مکالمہ اور تقریب بین المذاہب کے لیے استعمال کریں تاکہ اسلامی مسالک کے درمیان تفرقہ، اختلاف اور نفرتوں کے بجائے اتحاد، قربت اور محبت بڑھ سکے۔ آج مختلف مسالک کے بہت سے حوزہ ہائے علمیہ اپنے ہاں پڑھائے جانے والے مکمل نصاب کو اپنے مدارس کے ویب سائٹس پر اپلوڈ کرتے ہیں جس سے گزشتہ زمانوں میں ایک دوسرے کے بارے میں پھیلی ہوئی غلط فہمیوں کے دور ہونے میں مدد ملتی ہیں۔جو ایک حوصلہ افزاء امر ہے۔ اس ضمن میں انٹرنیٹ(فضای مجازی) پر مکالمہ بین المذاہب اور تقریب بین مذاہب کے درج ذیل اور دیگر مواقع کا تفصیل کے ساتھ تحقیقی جائزہ پیش کیا جائے گا۔ مختلف مسالک کے علمائے کرام کے انٹرنیٹ پر ایک دوسرے سے روابط اور مکالمے کو فروغ دینا۔ فیس بک پر مختلف مسالک کے علما ء کو دوستو ں کی فہرست میں شامل کرنا نیز ان کے صفحات کے ذریعے ان کے صحیح آراء و نظریات سے آگاہ ہونا۔ واٹس ایپ، ٹیلی گرام، انسٹاگرام وغیرہ پر مختلف مسالک کے علماء اور ذمہ دار علمی شخصیات کے گروپس تشکیل دینا تاکہ مکالمہ بین المذاہب کی راہ ہموار ہو سکے۔ مختلف مسالک کے نامور اور ذمہ دار علمائے کرام کے ٹیلی گرام اور دیگر ایپس پر موجود چینلز اور صفحات کو فالو کرنا تاکہ ان علماء کے صحیح نظریات اور ان کے مسلک کی صحیح تعلیمات سے آگاہی حاصل ہو جائے۔ 1- مدارس کے ویب سائٹس کو مزید فعال بنانا۔ 2- حوزات علمیہ کا اپنی لائبریریوں کو انٹرنیٹ کے ساتھ متصل کرنا۔ 3- علمی مقالات کو انٹرنیٹ پر عمومی دسترس دینا۔ 4- مختلف مسالک کے حوزات علمیہ کے دروس اور لیکچرز کو انٹرنیٹ پر اپلوڈ کرنا۔ 5- مختلف مسالک کے حوزات علمیہ کا ایک دوسرے کے ساتھ مستقل آنلائن ارتباط اور علمی مطالب، مسائل اور افکار کا تبادلہ۔ 6- آنلائن کلاسز اور دروس کا انعقاد۔